The Greatness of The Prophet Of Peace شانِ خاتم الانبیاء ﷺ

Hafiz Has Qadri, Word for Peace

اﷲ تعالیٰ نے اپنے حبیب حضور ختمی مرتبت ﷺ کو ایک مکمل شریعت دے کر مبعوث فرمایا جس میں نہ کسی تبدیلی کی ضرورت باقی رہی نہ کمی کی کوئی گنجائش رہی۔ گزشتہ انبیاء کسی خاص قوم یا علاقے کے لئے معبو ث ہوئے تھے۔ آنحضرت ﷺ تمام انسانیت کے لئے مبعوث ہوئے اور ہر علاقے ، ہر قوم ، ہر رنگ ونسل کے لوگوں کے لئے رسول بن کر تشریف لائے۔ گزشتہ انبیاء کرام کسی قوم ، کسی علاقے اور مخصوص وقت کے لئے آئے ۔حضور نبی اکرم ﷺ سارے عالم کے لئے Universal رسول بن کر تشریف لائے۔ قرآن کریم میں ارشاد باری تعالیٰ ہے ۔ اِنَّا اَرْسَلْنٰٰکَ بِالْحَقِّ بَشِیْرًا وَّ نَذِیْراًط وَاِنْ مِّنْ اُمَّۃٍ اِلَّاخَلَا فِیْھَا نَذِیْرُٗط(ترجمہ : بے شک ہم نے آپ کو بھیجا ہے حق کے ساتھ خوشخبری سنانے اور ڈرانے والا۔ اور کوئی امت ایسی نہیں گزری جس میں ڈرانے والا نہ گزرا ہو۔القرآن سورہ فاطر۳۵،آیت ۲۴)

نبوت کا سلسلہ کسی ملک، علاقہ یا قوم کے ساتھ مخصوص نہیں، جہاں بھی انسانوں کا گروہ آباد تھا وہاں اﷲ تعالیٰ کی طرف سے کوئی ڈرانے والا ان کے پاس ضرور آیا ۔لیکن حضور خاتم النبین ﷺ کی بعثت کے بعد سلسلہ نبوت ہی ختم ہوگیا۔ اب ہر قوم، ہر زمانہ میں حضور سید الانبیاء و خاتم الرسل کی ذاتِ پاک ہی منبع ہدایت اور اسوہِ حسنہ ہے۔ (اب تبلیغ کا فریضہ حضور کی امت کے اولیاء و علماء انجام دیں گے)حضور کے بعد نبوت کا دعویٰ کرنے والا کذّاب اور دجال ہے ۔ جس طرح احادیث صحیحہ میں مذکور ہے۔ نیز ان آیات میں واضح ہے ۔ یَا اَیُّھَاالنَّاسُ اِنِّی رَسُوْلُ اللّٰہِ اِلَیْکُمْ جَمِیْعًاط نیز وَمَآ اَرْسَلْنَاکَ اِلَّا کَآفَّۃً لِلنَّاسط۔ حضور ﷺ اس ارشاد خدا وندی کے مطابق بنی نوع انسان کے لئے تا قیامت رسول ہیں تو پھر مزید رسول کی گنجائش نہیں رہتی۔ اﷲ تعالیٰ نے انسانوں کی ہدایت کے لئے ہر قوم میں رسول بھیجے۔ وَلِکُلِّ اُمَّۃٍ رَّسُوْلُٗ ط (اور ہر امت میں رسول ہوا۔القرآن سورہ یونس۱۰، آیت ۴۷) وَمَامُحَمَّدُٗ اِلَّا رَسُوْلُٗ قَدْ خَلَتْ مِنْ قَبْلِہِ الرُّسُلْ ط(ترجمہ: اور محمد تو ایک رسول ہیں ۔ ان سے پہلے اور رسول ہوچکے( القرآن سورہ آلِ عمران۳،آیت ۱۴۴)

شانِ ختم نبوت کا اعلان قرآن میں
مَاکَانَ مُحَمَّدُٗ اَبَآ اَحَدٍ مِّنْ رِّجَالِکُمْ وَلٰکِنْ رَّسُوْلَ اللّٰہِ وَ خَاتَمَ النَّبِیِّنْ ط وَکَانَ اللّٰہُ بِکُلِّ شَی ءٍ عَلِیْمًا(ترجمہ : محمد تمھارے مردوں میں کسی کے باپ نہیں بلکہ وہ اﷲ کے رسول اور خاتم النبین ہیں اور اﷲ سب کچھ جانتاہے۔(القرآن سورہ الاحزاب ۳۳، آیت ۴۰)

حضور کے ایک ہزار نام ہیں جن میں محمد، احمد ذاتی نام ہیں،باقی صفاتی نام ہیں ۔(روح البیان/نور العرفان صفحہ ۶۷۵) ختم نبوت کا عقیدہ اسلام کے ان بنیادی عقیدوں میں سے ایک ہے جن پر امت کا اجماع رہا ہے۔ حضور آخری نبی ہیں ۔ جس نے آخری نبی نہ مانا اس نے اﷲ کے ارشاد کی تکذیب کی اور جو اﷲ تعالیٰ کے کسی ارشادکو جھٹلایا وہ مسلمان نہیں رہ سکتا۔ اس کے علاوہ بھی متعدد آیات میں حضور کریم کی شان کو اس طرح بیان کیا گیا ہے کہ ہر وہ آدمی جسے عقل وشعور کی دولت سے اﷲ پاک نے نوازاہے وہ آپ ﷺ کی شانِ ختم نبوت کا بخوبی احساس کر لیتا ہے۔ حضور ﷺ کے وصفِ خاتم نبوت کو قرآن نے صراحت کے ساتھ ذکر فرمایاہے۔ احادیث کریمہ میں اس وصف کے ذکرکے بعد حضور کی ختمیت کو ایک عقیدے کی حیثیت حاصل ہے جس کے متعلق فقہائے کرام لکھتے ہیں کہ اس سلسلے میں ادنیٰ شک بھی انسان کو دائرہ اسلام سے خارج کے لئے کافی ہے۔ حضور نبی کریم ﷺ کے ارشادات کا تذکرہ بھی ضروری ہے۔ ملاحظہ فرمائیں۔

حضرت ابو ہریرہ ص سے روایت ہے کہ نبی کریم ﷺ نے ارشاد فرمایا :میری اورمجھ سے پہلے انبیاء کی مثال ایک محل سی ہے جسے عمدگی کے ساتھ تعمیر کیاگیامگر ایک اینٹ کی جگہ چھوڑ دی گئی تھی۔ دیکھنے والے آتے تھے اور مکان کی عمدگی کو دیکھ کر اس خالی جگہ پر تعجب ظاہر کرتے تھے۔ اب میں نے آکر اس خالی جگہ کو بھر دیا ہے اور میرے بعد رسولوں کی آمد کا اختتام ہوگیا۔ ایک اور روایت میں ہے کہ میں آخری اینٹ ہوں اور میں ہی خاتم النبین ہوں (بخاری، مسلم) ۔حضرت ابوہریرہ ص ہی سے دوسری روایت یہ بھی ہے کہ حضور ﷺ نے فرمایا:مجھے دوسرے نبیوں کے مقابل چھ(۶) فضیلتیں عطا ہوئی ہیں۔مجھے جوامع الکلم دئے گئے(یعنی الفاظ مختصر اور معانی کا بحر بے کنار)، رطب سے میری مدد کی گئی ، میرے لئے مالِ غنیمت کو حلال کیا گیا، پوری زمین کو میرے لئے سجدہ گاہ بنا دیا گیااور اس سے تیمم کی اجازت دی گئی، مجھے تمام مخلوق کے لئے مبعوث کیا گیا اور مجھ پر نبیوں کی آمد کا اختتام ہوا۔(کتاب المناقب باب خاتم النبین،مسلم شریف،ترمذی، ابن ماجہ)

امام احمد ص ترمذی اور حاکم نے بسند صحیح حضرت انس صسے روایت کیاہے کہ حضور ﷺ نے ارشاد فرمایا :رسالت و نبوت کا خاتمہ ہوچکاہے اب میرے بعد نہ تو کوئی نبی ہے نہ رسول۔ حضرت ابو امامہص بیان کرتے ہیں، نبی کریم ﷺ نے ارشاد فرمایاحجۃ الوداع کے خطبے میں :اے لوگو!آگاہ رہو کہ میرے بعد نہ تو کوئی نبی نہ اب کوئی امت ہے۔بخار ی و مسلم میں حضرت مطعم صسے روایت ہے کہ میں نے نبی کریم ﷺ کو یہ فرماتے ہوئے سنا کہ میرے کئی نام ہیں۔میں محمدہوں،میں احمد ہوں، میں ماحی ہوں جس کے ذریعہ کفر کو مٹناہے۔ میں حاشرہوں لوگ قیامت میں میرے بعد اٹھائے جائیں گے اور میں ہی عاقب ہوں۔ عاقب اسے کہتے ہیں جس کے بعد کوئی نبی نہ ہو۔(بخاری و مسلم) حضرت ثوبان سے روایت ہے کہ نبی ﷺ نے ارشاد فرمایا کہ میرے بعد تیس(۳۰) جھوٹے نبی پیداہوں گے جن میں سے ہر ایک یہ دعویٰ کرے گاکہ وہ نبی ہے حالانکہ میں خاتم النبین ہوں۔(ابو داؤد کتاب الفتن)بعض روایات میں یہ بھی آیا ہے کہ بہت سے جھوٹے (نبی) پیدا ہوں گے۔ ان تمام روایات سے بخوبی ظاہر ہے کہ نبی کریم ﷺ کو خاتم النبین نہ ماننا قرآن و حدیث کا انکار ہے،جو انسان کو اسلام سے خارج کرنے کے لئے کافی ہے۔ اس سلسلے میں یہ روایت بھی بڑی واضح ہے ،جس میں حضور ﷺ نے حضرت عمر فاروق ص کے متعلق ارشاد فرمایاکہ اگر میرے بعد کوئی نبی ہوتا تو عمر نبی ہوتے۔(امام بخاری اور امام مسلم نے فضائل صحابہ کے عنوان کے نیچے یہ ارشاد نبوی نقل کیا ہے۔ تفسیر ضیاء القرآن ،جلد۴،صفحہ۷۱۔۷۳)اسی طرح سیدنا حضرت علی کرم اﷲ وجہہ کے متعلق ارشاد نبوی ہے کہ تم میرے لئے ایسے ہو جیسے موسیٰ کے لئے ہارون مگر یہ کہ میرے بعد کوئی نبی نہیں۔ ان روایات سے یہ بھی ثابت ہے کہ آیت خاتم النبین کامفہوم و معنی آخری نبی ہے جسے تقریباً تمام مفسرین نے نقل کیا ہے اور اسی سے یہ بھی واضح ہے کہ اس کے علاوہ کوئی مفہوم و معنی ہو ہی نہیں سکتا۔ کوئی دوسرا مفہوم کھینچ تا ن کر نکالاجائے تو یہ اس کے باطل ہونے کی نشانی ہے اور اس کو زندقہ(کفر بے دینی) کہتے ہیں جو بدترین کفر ہے۔

موضوع (Topic) شان خاتم الانبیاء کے ربط کے طور پر یہ ذہن نشیں رہنابھی ضروری ہے کہ حضور ﷺ کا خاتم النبین ہونا بھی تمام عالم ِ انسانیت کے لئے رحمت ہے جس کی تشریح مفسرین کرام یہ فرماتے ہیں کہ نبی کی آمد آزمائش بھی ہے ۔ نبی کے بعثت کے بعد اس نبی کا ماننا بھی نجات کے لئے ضروری ہے۔ جولوگ نبی کو نہ مانیں وہ راہ ہدایت سے دور ہوں گے اور جہنم کے مستحق قرار پائیں گے۔ حضور ﷺ کو آخری نبی ماننا قرآن و حدیث پر عمل کرناہے اور نجات کا باعث ہے۔

رحمت عالم ﷺ
اﷲ تعالیٰ نے قرآن مجید میں فرمایا وَمَا اَرْسَلْنٰکَ اِلَّا رَحْمَۃً الِّلْعَالَمِیْنْ(ترجمہ: ہم نے آپ کوتمام جہان والوں کے لئے رحمت بناکر بھیجا ہے۔(القرآن سورہ الانبیاء ۲۱،آیت ۱۰۷) آپ ْ کا یہ ایسا وصف ہے جس کا تعلق ساری انسانیت بلکہ تمام کائنات سے ہے۔ آنحضرت ﷺکواﷲ رب العزت نے ساری کائنات کے واسطے رحمت بنا کر بھیجا ہے۔ مولائے رحیم نے اس آیت کریمہ میں صراحتاً اس کا اظہار فرمایاہے۔ سیرت رسول کریم ﷺ کا مطالعہ کیاجائے تو ہر ہر سطر ، ہر ورق اور ہر قدم پر اس کا عملی ثبوت ملتاچلا جاتاہے۔ اگر کوئی شخص یہ بیان کرنا چاہے کہ رسول اﷲ ﷺ کی ذات گرامی کس کس لحاظ سے بنی نوع انسان کے لئے رحمت بنا کر بھیجی گئی ہے تو اس کے لئے کوئی ایک تقریر یا ایک مقالہ یا مضمون نہیں بلکہ سینکڑوں تقریریں، مقالات ومضامین درکارہوں گے پھر بھی حق پورا نہ ہو سکے گا۔ حضرت مصلح الدین سعدی شیرازی قد س سرہٗ اپنی محبت کا یوں اظہار فرماتے ہیں:
بلغ العلی بکمالہ کشف الدجیٰ بجمالہ
حسنت جمیع خصالہ صلو علیہ و آلہ

پھرآپ ﷺ کی حیات طیبہ کاکوئی ایک پہلو نہیں، اتنے پہلو ہیں کہ ان کا شمار نہیں ہو سکتا۔ ان میں سے ہر پہلو کو بیان کرنے کے لئے ایک نہیں سینکڑوں کتابیں درکارہوں گی۔ ان تمام پہلوؤں میں صرف ایک پہلو یعنی آپ کے رحمت ِ عالم ہونے کے بارے میں کچھ عرض ہے۔
ہزار بار بشویم دہن زمشک و گلاب
ہنوز نام تو گفتن کمال بے ادبی است

حیاتِ مبارکہ کا یہ پہلو اس لحاظ سے بطور خاص قابلِ مطالعہ ہے کی پوری انسانی تاریخ میں ایک ہی ایسی ہستی نظر آتی ہے،جو حقیقت میں انسانوں کے لئے رحمت ثابت ہوئی ہے۔ حیاتِ طیبہ کی رحمت کا وہ خاص رخ یہ ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے انسانی سماج کے لئے وہ اصول اور ضابطے پیش کئے جن کی بنیاد پر اگر انسان چاہے تو ایک عالمی ریاست (World State) کی تشکیل کی جا سکتی ہے اور اس تقسیم کو، جو انسانوں کے درمیان آج پائی جاتی ہے بلکہ ہمیشہ پائی جاتی رہی ہے اوروہ ہمیشہ انسانوں کے درمیان ظلم و فسادکا سبب بنتی رہی ہے، اس کو ختم کیاجا سکتاہے۔

محسنِ انسانیت حضور اقدس ﷺ نے فرمایا: یَا اَیُّھَنَّا النَّاسُ اِنِّی رَبَّکُمْ وَاحِدُٗ وَاِنِّی اَبَا کُمْ وَاحِدُٗ لَا فَضْلَ لِعَرَبَیٍّ عَلیٰ عَجَمیٍّ لَا لِعَجَمیٍّ عَلیٰ عَرَبِیٍّ وَلَا لِاَ حْمَرَ عَلٰی اَسْوَدَ وَلَا لِاَسْوَدَ عَلیٰ اَحْمَرَاِلَّا لتَّقْوٰی اِنَّ اَکْرَمَکُمْ عِنْدَ اللّٰہِ اَتْقَاکُمْ(ترجمہ: اے لوگو! تم سب کا رب ایک ہے۔ اور تم سب ایک باپ کے بیٹے ہو۔ کسی عربی کو عجمی (یعنی غیر عرب) پر اور کسی عجمی کو عربی پر کوئی فضیلت نہیں ہے ،نہ کسی گورے کو کالے پر اور نہ کسی کالے کو گورے پر کوئی فوقیت حاصل ہے۔ سوائے اس کے جو تقویٰ شعارہو۔یاد رکھو اﷲ تعالیٰ کے نزدیک تم میں زیادہ معزز وہی ہے جو سب سے زیادہ متقی اور پرہیزگار ہے) آپ ﷺ کی اس بنیادی تعلیم نے نوع انسانی کے تمام طبقات کوعزت و شرف کا ایک بلند مقام عطا کیا ہے اور عملی طورپر قرون اولیٰ کے مسلمانوں میں جو فقید المثال امن قائم کیا اس کی مثال مذہبی یا غیر مذہبی دنیامیں کہیں اور نظر نہیں آتی۔

یہی وہ مرکزی نقطہ ہے جو تمام انسانوں کو بلا لحاظ مذہب و ملت ایک لڑی میں پروتاہے اور ان کے تمام حقوق اور ضروریات کا تحفظ کرتاہے۔ اسلام نے اسی آفاقی تصور کا حکم دیا جو ان تمام رنگ و نسل اور علاقائی و قومی امتیازات کو یکسر مٹا دیا جو انسانی برابری اور اخوت کے منافی ہے۔ چنانچہ ارشاد باری تعالیٰ ہے۔یَآ اَیُّھَالنَّاسُ اِنَّا خَلَقْنٰکُمْ ․․․․الخ(ترجمہ: اے لوگو! ہم نے تم کو مرد اور عورت سے پیداکیا اور تم کوکئی گروہوں اور قبائل میں تقسیم کیا تاکہ تم ایک دوسرے کوپہچانو۔ اﷲ کے نزدیک تم میں سے زیادہ معزز وہی ہے جو سب سے زیادہ متقی (اﷲ سے ڈرنے والا)ہے۔یقینا اﷲ بہت علم رکھنے والا اور بہت خبر رکھنے والا ہے۔(القرآن سورہ الحجرات ۴۹،آیت ۱۳)

اﷲ تعالیٰ نے حضور سید عالم ﷺ کو رحمۃ اللعلمین بنا کر مبعوث فرمایا ۔ آپ نے وحشی خصلت قوم کو آدابِ انسانیت کے زیور سے آراستہ فرمایا۔ آپ نے عربوں کی صدیوں پرانی نسل پرستی اور تنگ نظری کو حرفِ غلط کی طرح مٹا دیا۔ فرمایا:سب انسان یکساں ہیں اور سب اسی خدائے واحد کے بندے ہیں اور آپس میں بھائی بھائی ہیں۔ اِنَّ الْعِبَادَکُلُّھُمْ اِخْوَۃُٗ(مسند احمد، جلد۴،صفحہ۳۶۹)۔یہ وہ تصور تھا جس نے نسلی امتیازات کے دلدادہ قوم کو باہم شیرو شکر کر دیا اور تنگ نظری و تنگ ظرفی کی جگہ ان میں وسعتِ قلبی اور فراخ دلی پید اکردی۔

رحمۃ اللعالمین کا اسوۃ حسنہ
مخلوق خدا کے ساتھ اچھا برتاؤ اور حسنِ سلوک کے بے شمار واقعات سیرت کی کتابوں میں موجود ہیں۔ سیرت رسول اور اسلام اخلاق حسنہ کا داعی ہے اور جو مکارمِ اخلاق سے خالی ہو وہ عند الاسلام مومن کامل نہیں۔ امام ترمذی اپنی کتاب ’’شمائلِ ترمذی‘‘باب ماجاء فی خلق رسول اﷲ ﷺ میں ایک حدیث نقل فرماتے ہیں۔ حضرت انس بن مالک ص فرماتے ہیں: خِدْمَتِ رسول اﷲ ﷺ عَشَرَ سِنِیْنَ فَمَا قَالَ لِی اُفٍّ قَطُّ وَمَا قَالَ لِشَی ءٍ صَنَعْتَۃُٗ وَلَا لِشَی ءٍ تَرَکْتَہٗ وَکَانَ رسول اﷲ ﷺ مِنْ اَحْسَنَ النَّاسُ خُلْقاً(میں نے رسول اﷲ ﷺ کی خدمت اقدس میں دس سال گزارے ۔آپ نے مجھے کبھی اف تک نہ فرمایا اور میرے کسی کام کے کرنے پر یہ نہ فرمایاکہ یہ کام تونے کیوں کیا اور میرے کسی کام کے نہ کرنے پر یہ نہ فرمایا کہ تو نے یہ کام کیوں نہیں کیا؟اور رسول اﷲ ﷺ لوگوں میں سب سے زیادہ پسندیدہ اور اچھے اخلاق کے مالک تھے۔ )امام ترمذی اپنی اسی کتاب ’’شمائل‘‘ میں آپ کے خلق عظیم کے تعلق سے ایک حدیث روایت کرتے ہیں۔ ام المومنین سیدہ عائشہ صدیقہ رضی اﷲ عنھما فرماتی ہیں: مَاضَرَبَ رَسُول اﷲ ﷺ بِیَدِہٖ شَیْئاً اِلَّا اَنْ یُّجَا ہَدَ فِی سَبِیْلِ اللّٰہِ وَلَا ضَرَبَ خَادِماً وَلَا اِمْرَاۃً(رسول اﷲ ﷺ نے جہاد فی سبیل اﷲ کے علاوہ کسی کو اپنے ہاتھ سے نہیں مارا نہ کسی خادم کو اور نہ کسی عورت کو)۔ یہ ہے آپ کا خلق عظیم۔

ماہرین سیرت مصطفی کو آپ کی سیرت کے مطالعہ کے بعد اطمینان قلب، دماغی سکون، ذہنی فرحت و سرور اور نشاط و انبساط حاصل ہوتا ہے اور عبرت و نصیحت ،حکمت و موعظت کا حصول ہوتاہے۔ اخلاق حسنہ اور اوصاف حمیدہ ایسے انمول ہیرے ہیں جو بعثت رسول کا مقصد ہیں۔ جیسا کہ امام حاکم مستدرک ،کتاب التاریخ باب دلائل النبوۃ ،جلد دوم صفحہ۶۱۳، میں اور امام بیہقی نے اپنی سنن کتاب الشہادت باب بیان مکارم الاخلاق جلد۱، صفحہ ۱۹۱،۱۹۲ میں ،امام مالک بن انس مؤطا جلد۱، صفحہ ۹۴۰ میں حدیث رسول روایت کرتے ہیں۔ اِنَّمَا بُعِثْتُ لِا تَمِّیْمَ مَکَارِمَ الْاَخْلَاق (اﷲ کے رسول نے ارشاد فرمایا :میں اس لئے مبعوث کیاگیا ہوں تاکہ اچھے اخلاق کی تکمیل کروں)۔یہ حدیث جوامع الکلم سے ہے اور فصاحت و بلاغت کے عرش اعظم پر فائز ہے۔ اہل علم و دانش ، صاحبِ فکر و بصیرت پر یہ امر مخفی نہیں ہے کہ اﷲ کے رسول ﷺ نے لا تمم الاخلاق نہیں فرمایا بلکہ لِا تَمِّیْمَ مَکَارِمَ الْاَخْلَاقفرمایا۔ ان دونوں عبارتوں میں واضح فرق موجود ہے۔ یہ ایسی حسین و دلکش تعبیر ہے جس کا بدل فصاحت و بلا غت کی دنیا میں موجود نہیں۔ لا تمم الاخلاق اور لِا تَمِّیْمَ مَکَارِمَ الْاَخْلَاق کا فرق اظہر من الشمس ہے۔ رسول اکرم ﷺ کے یہ چند فوائد ہیں جز سے کل کی طرف، قلیل سے کثیر کی طرف اشارہ ہے۔ اس کے علاوہ سیرت رسول کے بے شمار فوائد ہیں جن سے دنیا کے ہر خطہ میں ہر فرد رہنمائی حاصل کر سکتا ہے۔

سیرت رسول اﷲ ﷺ اور ہماری ذمہ داریاں
اگر ہم اور آپ رسول اﷲ ﷺ کی سیرت پاک کے متعلق جلسے کریں، کانفرنس کریں تو نہایت مبارک کام ہے۔ ذکر خیر رسول اﷲ ﷺ سے زیادہ بڑی سعادت کوئی نہیں۔ لیکن محض Lipserviceنہ کیجئے اور صرف زبانی جمع خرچ سے رسول اﷲ ﷺ کو خراج عقیدت پیش کرکے نہ رہ جایئے بلکہ جو تعلیم حضور لے کر آئے ہیں اور آپ ﷺ نے جو ہدایت ہم تک پہنچائی ہے اس کی پیروی بھی کیجئے ۔ ہم تمام اہلِ ایمان آپ ﷺ کی سیرت ، آپ کی تعلیم پر عمل پیرا ہوکر نہ صرف اپنی دنیا و آخرت کو سنواریں بلکہ ساری دنیا کو اس پیغام سے روشناس کرائیں۔ اسلام کی تبلیغ میں جہاں قرآن پاک، کلامِ الٰہی و احادیث نبوی کا کردار ہے وہیں سیرت نبوی، آپ ﷺ کی عملی زندگی، صحابہ کرام، اولیاء اﷲ کی زندگیاں اور ان کا اخلاق و کردار کوبھی اسلام کی تبلیغ کا ذریعہ بنا ئیں۔ ہم اسلامی سفیر بن کر عملی زندگی میں سیرت نبوی کو اپنائیں۔ ربیع الاول کے پیغامِ محمدی کو اپنے سینے سے لگائیں۔ ربیع الاول کے جشن جلوس محمدی اور جلسوں کے وقت اپنا محاسبہ کریں ، جائزہ لیں کہ ہمارے اندر تعلیمات رسول اﷲ ﷺ کا عملی حصہ کتنا پایا جاتا ہے۔ اﷲ ہم تمام مسلمانوں کو عمل کی توفیق رفیق عطا فرمائے۔ آمین! ( Mob.:09431332338 e-mail:hhmhashim786@gmail.com, )
٭٭٭٭

Check Also

शीतकालीन सत्र में तीन तलाक खत्म करने के लिए आ सकता है विधेयक

WordForPeace.com केन्‍द्र सरकार शीतकालीन सत्र में तीन तलाक खत्म करने के लिए विधेयक ला सकती …

10 comments

  1. pls make the font larger so that people can read and understand it better.

  2. Analysis the Palomar Fractional Laser to clear acne scarring scars left
    on skin including troubles the laser might
    help enhance, how the laser works, gains and dangers.

  3. Ray Ban Pas Cher

    Ray Ban Pas Cher http://mullers.co.za/Ray-Ban_ByVqO-v3/, I always used to read piece of writing in news papers but now as I am a user of net thus from now I am using net for content, thanks to web.|

  4. I just like this site so much, saved to bookmarks.

  5. alcoholic treatment

    Thanks for this marvellous post, I’m pleased I found this
    web site on the search engines.

  6. It was great finding your website yesterday. I arrived here nowadays hunting something totally new.

    I wasn’t frustrated. Your ideas after new approaches on this thing have been useful plus an excellent help to me personally.

    We appreciate you having time to write down these items and then for sharing your thoughts.

  7. substance abuse treatment

    I read a few very good stuff here. Surely worth bookmarking for revisiting.

    I’m wondering just how much effort you put to produce such
    a fantastic educational website.

  8. ibreak4glass.blog.ww.w.isaev.info

    Woah I enjoy your posts, bookmarked! My significant other and i loved your posts.

  9. auto accident lawsuit

    The article submitted was very educational as well as
    handy. You people are doing a great job. Keep posting.

  10. outpatient alcohol rehab

    I have been reading out a lot of your articles and i can claim pretty nice stuff.
    I will ensure to bookmark your blog.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *