Nation for PeaceReligion for PeaceUrdu

Why Muslim Backward Classes Deserve the Reservation?

Word For Peace Special

محمد حسین شیرانی

Muslims in Indiaپسماندہ، ایک فارسی لفظ ہے جو کسی کے پیچھے رہ جانے کے لئے استعمال ہوتاہے۔ لفظ “پسماندہ” در اصل مسلم شودر (مسلم دلت) درجات سے تعلق رکھنے والے طبقہ کی طرف اشارہ کرتا ہے۔پسماندہ کو اشراف المسلمین (ہائی کلاس) کے مخالف کردار کے طور پر نمایاں کیا گیا تھا۔ مسلمانوں میں ذات پات کی تحریکوں کے تاریخی پس منظر کو بیسویں صدی کے دوسرے عشرے میں مومن تحریک کے آغاز کے بعدسے دیکھا جا سکتا ہے۔ یہ (1990 کی دہائی) ہے جس نے اسے زندگی کا نیاموڑ لیتے دیکھا۔ اس دہائی میں بہار میں دو صف اول کی تنظیموں کی ترقی دیکھی گئی جس میں اعجاز علی کی طرف سے چلائی جانے والی”آل انڈیامتحد مسلم مورچہ (1993)“ اوردوسری علی انور کی”آل انڈپسماندہ مسلم محاذ (1998)“ اور بہت سی دوسری تنظیموں کی طرف سے چلائی جانے والی تحریکیں شامل ہیں۔جبکہ پسماندہ فارسی کیلفظ ہے جو حقیقی معنوں میں وہ افراد جو پیچھے رہ گئے ہیں، پریشان کن یاجن پر زیادتی کی گئی ہو۔ سادہ طور پر دیکھا جائے تویہاں پسماندہ لفظ دلت اور پچھڑے مسلمانوں کی طرف اشارہ کرتا ہے جو مسلم آبادی کا تقریباً 85 فیصد ہے اور ہندوستان کی تقریباً 10 فیصد آبادی ہے۔
اس حقیقت کے باوجود کہ اسلام ذاتوں کے نام پر کی جانے والی کسی بھی امتیازی سلوک کی حمایت نہیں کرتا۔جبکہ جنوبی ایشیا میں مسلمسماج اس کے برعکس ہے۔ یہ کچھ بھی ہے مگرغیر جانبدار(اشرف طبقہ) اور ہندستانی تبدیلی مذہب کرنے والے (ازلف)کے مذہبی الگاو کا نتیجہ ہے۔برادری فریم ورک ایک انداز ہے جس کے ذریعے پاکستان میں سماج میں اپنی برادری کو بہتر کے طور پر ظاہر کرناہے، اور ایک حد تکہندستان میں بھی یہی حال ہے۔ حالانکہ اسلام کسی بھی درجے کو کسی بھی صورت میں قبول نہیں کرتا۔وہ مسلمان جو بارہویں صدی کی مسلم فتوحات کے دوران برصغیر پاک و ہند میں آئے تھے اس وقت سماجی طبقات الگ تھے۔ مزید یہ کہ نسلی الگاو نے مقامی مسلم معاشروں کو غیر ملکی نسب سے الگ کر دیا۔باہر سے آنے والوں نے ایک اہم حیثیت کا دعویٰ کیا کیونکہ وہ فاتحین میں سے تھے، اور اپنے آپ کو اشرف (قابل احترام)سمجھتے تھے۔
دلی سلطنت کے چودہویں صدی کے سیاسی ماسٹر مائنڈ ضیاء الدین برنی نے تجویز دی کہ اشرف طبقہ کی اولاد کو ازلف سے زیادہ سماج میں احترام کا مقام دیا جائے۔ جیسا کہ برنی نے اشارہ دیا کہ ہر عمل جو ”بدصورت،داغدار یا ذلیل سمجھے جاتے ہیں وہ ارذل طبقہ سے تعلق رکھتے ہیں۔ عام طور پر،جولاہا سے تعلق رکھنے والے متعدد مسلمانوں کی انصاری،قصائی اور قریشی کے نام سے پہچان شروع ہوئی۔
اعلی طبقے کے مسلمانوں (اشرف) کی طرف سے ان کے ساتھ کیے جانے والے بہت سے تعصبات سے لڑنے کے لیے ”پسماندہ مسلم محاذ“ تنظیم کی بنیاد علی انور نے رکھی تھی جو پٹنہ کے ایک او بی سی مسلمان تھے، جب انہیں اشرف کی طرف سے ارزل یا پسماندہ مسلمانوں کے خلاف ذات پات کے ظلم کا احساس ہوا تو ”پسماندہ مسلم محاذ“ اترپردیش، دہلی، بہار، جھارکھنڈ اور مغربی بنگال کی ریاستوں میں پسماندہ مسلمانوں کے خلاف بڑھتے ہوئے ظلم کے بعد وجود میں آیا۔اس کا آغازہندوستانی دلت مسلمانوں نے کیا جبکہ یہ ثابت کرنے کی کوشش بھی ہوئی کہ ہندوستانی مسلمان ایک یکساں فرقے کے سوا کچھ بھی نہیں ہیں۔ یہ وہ بحث ہے جس نے مسلمانوں کے درمیان اشرف (اعلی درجے کے مسلمان) اور پسماندہ (پسماندہ اور دلت مسلمانوں کا امتزاج) کے درمیان قابلیت پر بحث کو آگے بڑھایا۔ ایک مطالعہ سے پتہ چلتا ہے کہ مسلمانوں کے خلاف اب تک کا سب سے بڑا فرقہ وارانہ تشدد پسماندہ مسلمانوں کے ساتھ ہوا۔
یہ کئی مطالعات سے ثابت ہو چکا ہے کہ ہندوستانی مسلمان یک سنگی برادری نہیں ہیں۔ ہندوؤں کی طرح، ہندوستانی مسلمان بھی اپنی پوزیشنیں رکھتے ہیں جس میں اشرف(اعلیٰ مسلمان)،ازلف (پسماندہ مسلمان) اور ارزل (دلت مسلمان) شامل ہیں۔ پسماندہ تحریک ہندوستانی مسلمانوں کے گروہ کی مختلف خصوصیات پر زور دیتی رہی ہے۔ اس نے اسلام کے بنیادی اصولوں اور ہندوستانی مسلمانوں کے اعمال میں فرق کیاجو اصل اسلام کو برقرار رکھتا ہے۔پسماندہ طبقہ سماجی برابری کی وکالت کرتا ہے اور ذات پات کے تعصب کے خلاف کھڑا ہے۔ اگرچہ شرائط میں بھی، جیسا کہ اشرف کے درمیان بین ذات کی شادیوں کا ایک معمول ہے۔
پسماندہ سے متعلقریسرچ کرنے سے پتہ چلا کہ زیادہ تر وہ ذاتیں جو پسماندہ کے زمرے میں آتی ہیں ان کی نوکریاں ختم ہو گئیں (جیسے بنائی سے متعلق) کئی سالوں میں ٹیکنالوجی اور مشینری کے تعارف کی وجہ سے وہ ایک جگہ سے دوسری جگہ ہجرت کرنے پر مجبور ہیں اور ان کی مالی حیثیت کی وجہ سے تعلیم کا خرچ اٹھانا بھی مشکل ہے جسے پسماندہ برداشت نہیں کرسکتے۔ پوری پسماندہ برادری کی بقاء کے لیے پسماندہ تحریک کو بلند کرنا اولین ضرورت ہے۔

Husain Sherani is an Urdu columnist and employee at Jawaharlal Nehru University, New Delhi.

Show More

Leave a Reply

Your email address will not be published.

CAPTCHA ImageChange Image

Back to top button
Translate »